4.01.2020

وقت سے پہلے اذان دینا از روئے شرع کیسا ہے ؟؟؟

         السلام علیکم و رحمۃ اللہ تعالیٰ و برکاتہ 

سوال عرض ہیکہ... اگر وقت سے پہلے اذان دے دی گئی تو دوبارہ کہیں گے کہ نہیں... علمائے کرام رہنمائی فرمائیں 

        محمد ارشد رضا پروانہ سالماری کٹیہار
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
           وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

                 الجواب بعون الملک الوہاب

وقت سے پہلے اگراذان کہی گئی تواذان کااعادہ کیاجائے گایاوقت سےپہلےشروع کی تھی اثنائے اذان میں وقت ہوگیاجب بھی اعادہ کیاجائےگاجیساکہ سرکارصدرالشریعہ علیہ الرحمہ فرماتے ہیں وقت ہونے کے بعد اَذان کہی جائے قبل از وقت کہی گئی یا وقت ہونے سے پہلے شروع ہوئی اور اَثنائے اَذان میں وقت آگیا، تو اعادہ کی جائے(فتاوی ھندیہ کتاب الصلوۃ باب الاذان جلداول صفحہ 45) بہارشریعت جلداول حصہ سوم اذان کابیان

                  واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب

            کتبہ محمدافسررضاسعدی عفی عنہ

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only