فرض کی تیسری اور چوتھی رکعت میں سورۃ ملانا کیسا ہے




السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

ســـــــــوال بـــــرائـــےعـــلماءاکرام
حضرت عرض سوال یہ ہے کہ اگر کسی نے نماز فرض کی تیسری یا چوتھی رکعت میں الحمد کے بعد کوئی سورہ پڑھ دی تو اس پر کیا حکم لاحق ہوگا ؟

          سائل سائل محمدغلام غوث رضوی

           وعلیکم السلام ورحمةالله وبركاته

           الجواب بعون الملك الوهاب:

 تین یا چار رکعت والی فرض نماز میں تیسری یا چوتھی رکعت میں صرف سورہ فاتحہ پڑھنا ، اس کے ساتھ کوئی سورت یا آیت نہ ملانا سنت ہے ، واجب نہیں لہٰذا اگر کسی نے فرض نماز کی تیسری یا چوتھی رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد کوئی سورت یا آیت پڑھ لی تو مفتی بہ قول کے مطابق سجدہ سہو واجب نہ ہوگا جیسا کہ فتاوی شامی میں ہے کہ 👇 

📖 وفي أظھر الروایات لا یجب سجود السھو لأن القراءة فیھما مشروعة من غیر تقدیر ، و الاقتصار علی الفاتحه مسنون لا واجب 

👈 📗 فتاوی شامی ج 2 ص 150 بحوالہ منیہ و شرح منیہ : مطبوعہ: مکتبہ زکریا دیوبند )
 📖 اور فتاوی عالمگیری میں ہے کہ👇

  ولو قرأ فى الأخريين الفاتحة و السورة لا يلزمه السهو وهو الأصح " اھ

 📘 فتاوی عالمگیری ج 1 ص 126 : کتاب الصلاۃ ، الباب الثاني عشر في سجود السھو )

 اور بہار شریعت میں ہے کہ " فرض کی پچھلی رکعتوں میں سورت ملائی تو سجدۂ سہو نہیں اور قصداً ملائی جب بھی حرج نہیں مگر امام کو نہ چاہیے یوہیں اگر پچھلی میں الحمد نہ پڑھی جب بھی سجدۂ سہو نہیں اور رکوع و سجود و قعدہ میں قرآن پڑھا تو سجدہ واجب ہے

📚 بہار شریعت ج 1 ص 711 : سجدہ سہو کا بیان )

              واللہ تعالیٰ و رسولہ اعلم بالصواب

                     شــــــــرف قلـــــــم

 حــضـــرت علامہ مـــولانــا محمــــــــد مفتی کریم اللہ رضوی صـاحـب قبـلـہ مـدظلــہ الـعالـی والـنـوارنــی

      📚اســـــــلامی مـــعــلــومات گــــروپ📚

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے