مؤذن ہونے کے باوجود غیر شخص کو جمعہ کی اذان پڑھنا کیسا

Gumbade AalaHazrat

سوال
  علمائے کرام کی بارگاہ میں ایک سوال یہ ہے کہ اگر کوئی شخص ہفتے میں ایک مرتبہ جمعہ کی نماز پڑھنے کے لئے آئے اور وہ خود اقامت بولے کیا یہ صحیح ہے دو نائب امام ہونے کے باوجود جمعہ میں ایک مرتبہ آکے اقامت بولتا ہے کیا یہ صحیح ہے جواب عنایت فرمائیں آپ کی بڑی مہربانی ہوگی المستفی احسان رضا کرناٹک

       جواب

ایسا شخص جو ہفتے میں ایک مرتبہ جمعہ کی نماز کے لیے آتا ہے باقی نمازیں پڑھتا ہی نہیں ہے یا پڑھتا ہے مگر بغیر عذر جماعت سے نہیں پڑھتا تو ایسا آدمی فاسق ہے ایسے آدمی سے اذان و اقامت نہ کہلوائی جائے اور کہے تو اس کا اعادہ کیا جائے
جیسا کہ صدر الشریعہ بدر الطریقہ علامہ امجد علی رحمۃ اللہ تعالی علیہ فرماتے ہیں خنثیٰ و فاسِق اگرچہ عالِم ہی ہو اور نشہ والے اور پاگل اور نا سمجھ بچّے اور جنب کی اَذان مکروہ ہے، سب کی اَذان کا اعادہ کیا جائے۔اھ بہار شریعت جلد اول حصہ سوم صفحہ نمبر ٤٦٦ مطبوعہ مکتبۃالمدینہ کیونکہ اقامت مثل اذان کے ہے بلکہ اقامت اذان سے زیادہ مٶکد ہے فرق صرف بعض باتوں ہے جیسا کہ صدرالشریعہ علیہ الرحمۃ والرضوان فرماتے ہیں اِقامت مثل اَذان ہے یعنی احکام مذکورہ اس کے لیے بھی ہیں صرف بعض باتوں میں فرق ہے، اس میں بعد فلاح کے قَدْ قَامَتِ الصّلاۃُ دو بار کہیں ، اس میں بھی آواز بلند ہو، مگر نہ اَذان کی مثل، بلکہ اتنی کہ حاضرین تک آواز پہنچ جائے، اس کے کلمات جلد جلد کہیں ، درمیان میں سکتہ نہ کریں ، نہ کانوں پر ہاتھ رکھنا ہے، نہ کانوں میں انگلیاں رکھنا اور صبح کی اِقامت میں اَلصَّلٰوۃُ خَیْرٌ مِنَ النَّوْمِ نہیں اِقامت بلند جگہ یا مسجد سے باہر ہونا سنت نہیں ، اگر امام نے اِقامت کہی، تو قَدْ قَامَتِ الصَّلاۃُ کے وقت آگے بڑھ کر مصلّٰی پرچلا جائے۔ اِقامت میں بھی حَیَّ عَلَی الصَّلٰوۃِ حَیَّ عَلَی الْفَلَاحِ کے وقت دہنے بائیں مونھ پھیرے۔ اِقامت کی سنیّت، اَذان کی بہ نسبت زیادہ مؤکد ہے۔ اھ

بہار شریعت جلد اول حصہ سوم صفحہ نمبر ٤٧٠ مطبوعہ مکتبۃ المدینہ
واللہ ورسولہ اعلم بالصواب 

کتبہ ابوعبداللہ محمد ساجد چشتی

مقام شاہجہاں پوری خادم مدرسہ دارارقم محمدیہ میر گنج بریلی شریف

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے