فرض نماز پڑھنے کے بعد جماعت میں شامل ہونا کیسا ہے



                  السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ  

          ســـــــــــــوال بــــرائـــےعــلــــمـاءاکــــرام

کیا فرماتے ہیں علماٸے کرام و مفتیان کرام اس مسٸلہ ذیل کے بارے میں کہ زید ظہر یا عشإ کی نماز پڑھ رہاتھا جیسے زید نے سلام پھیرا اس کے کچھ دیر بعد جماعت قاٸم ہوٸی تو کیا زید جو کی اپنی نماز پڑھ چکا تھا تو اب ثواب کی نیت سے جماعت میں شامل ہوسکتا ہے یا نہیں جواب عنایت فرماکر شکریہ کا موقع عنایت کریں

الســـاٸل۔محمـــــد قمـــــرالدین قادری بمقـــام گینـــاپور ضــلع بہراٸچ شــــریف یوپی

       وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

              الــــــجــــــــــواب ــ

اگر کوئی شخص پہلے سے ہی فرض نماز پڑھ چکا ہے اور بعد میں پتا چلا کہ وہی فرض نماز جماعت سے ہورہی ہے تو وہ جماعت کے ساتھ شریک ہوجائے بشرطیکہ ظہر اور عشاء کی نماز کا وقت ہوفجر،عصر،مغرب کی نماز میں شریک نہ ہو اسلئے کہ فجر عصر کچھ نماز کے بعد نفل نماز پڑھنا مکروہ ہے۔
اور مغرب کے وقت اس لئے منع ہے جماعت کے ساتھ دوبارہ نو نماز ادا کی جائے گی وہ نفل ہوگی اور تین رکعات کی نفل نماز قرآن و حدیث سے ثابت نہیں خلاصۂ کلام : مذکور شخص شامل ہوجائے نفل کی نیت سے نماز اپنی منفرد کی حالت میں ادا ہوگئی اب نفل کا ثواب ملے گا۔ایسا ہی قانون شریعت و دیگر کتب فقہ و فتاوی میں ہے۔
(📘 عامہ کتب فقـہ )

                  واللہ ورسولہ اعلم بالصواب 

                       کــــــــتــــــــــبہ

حــضـــرت عـــلامــہ و مـــولانــا محمــــــــد عــــمـــر فـــاروق ربـــانــی صـــاحـــب 

            (🕋اســـــــلامی مـــعــلــومات گــــروپ🕋)  

ایک تبصرہ شائع کریں

1 تبصرے

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ