تعزیت کے لئے جانا کیسا ہے



         السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

                 ســـــــــــــوال


کیا فرماتے ہیں علماء کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ جب کسی کاانتقال ہو جائے تو اسکے گھر والوں یا رشتہ داروں کے پاس تعزیت کے لئے جانا کیسا ہے ؟برائے جواب عنایت فرمائیں

       سائلہ ۔👈 عظمہ بانو مہاراشٹر


    وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

            📖الــــــجــــــــــواب ــ

۔ تعزیت ۔یعنی ماتم پرسی کرنا سنت ھے ۔حدیث شریف میں ھے کہ جواپنے بھائ مسلمان کی مصیبت میں تعزیت کرے قیامت کے دن اللہ تعالی اسے کرامت کا جوڑا پہناۓ گا (📒ابن ماجہ)
ایک اور حدیث شریف میں ھے کہ جو کسی مصیبت والے کی تعزیت کرے گا اسے اسی کے برابر ثواب ملے گا ۔
(📙ترمذی شریف وابن ماجہ)
📒بہارشریعت جلداول حصہ چہارم صفحہ١٦٨
📘ھکذا فی انوارالحدیث صفحہ ٢٤٣
📕ھکذا فی نظام شریعت صفحہ ٣٦٥
📗ھکذافی قانون شریعت حصہ اول صفحہ١٦٦
علامہ شمس الدین احمد رضوی جعفری علیہ الرحمہ تحریرفرماتےھیں ،، حضوراقدس ﷺنے ان لفظوں سے تعزیت فرمائ ۔للّهِ ما اخذَوَاعطَیٰ وکلُّ شئٍ عندہٗ بِاجلٍ مسمٰی۔یعنی خداکاھی ھے جواس نےلیا اور دیا ھر چیز اس کے یہاں ایک مقرر میعاد کے ساتھ ھے
📘فتاوی عالمگیری ) وبہارشریعت حصہ چہارم جلداول ص ١٦٨
اور مستحب یہ ھے کہ میت کے تمام عزیزواقارب کو تعزیت کریں چھوٹے بڑے مرد وعورت سب کو ۔مگر عورت کو اس کے محارم ھی تعزیت کریں ۔
(📗فتاوی عالمگیری وبہارشریعت حصہ چہارم )
📘قانون شریعت حصہ اول ص١٦٦
📕نظام شریعت ص ٣٦٦


                  واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب 


                    شـــــــرف قـــــلــــــم

حــضـــرت عـــلامــہ و مـــولانــا مـــفـــتـی عــتــیــق الــلــلہ صــدیــقــی فـــیــضــی یـارعــلــوی ارشــدی عـــفی عـــنــہ صـــاحـــب 

        اســـــــلامی مـــعــلــومات گــــروپ

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے