مرگی والے کو گھر میں نماز پڑھنا کیسا ہے



           السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

سوال کرنے والے نے سوال کیا ہے ہے کہ میں نماز جماعت کے ساتھ پڑھ رہا تھا تھا تو اس کے دورے پڑے ے اور میں نمازیوں کے آگے گھومنے لگ گیا اس مرض کی وجہ سے یعنی جو مرگی ہوتی ہے ہے اس کی وجہ سے میں اب مسجد میں نہیں جاتا کتا تو کیا کیا میں گھر میں ہی نماز پڑھ سکتا ہوں یا میرا مسجد میں جانا ضروری ہے ہے اس بارے میں رہنمائی فرما دیجئے

                 منجانب ب تنظیم النور

           وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

                الجواب بعون الملک الوہاب 

صورت مسؤلہ میں ایسےشخص کومسجدمیں آنامنع ہےجس سےنمازیوں کوتکلیف پہونچےیانمازمیں خلل پیداہوجیساکہ سرکارصدرالشریعہ علیہ الرحمہ تحریرفرماتےہیں کہ کوڑھی اورسفیدداغ والےاوراس شخص کوجولوگوں کوزبان سےایذادیتاہومسجدسےروکاجائےبہارشریعت جلداول حصہ سوم مسجدکابیان تواب اگراس کویہ پریشانی ہےکہ وہ مرگی آنےکی وجہ سےمسجدمیں نمازیوں کےآگےگھومنےلگتاہےتواس کومسجدمیں آنےسےروکاجائےجب تک اس کی یہ بیماری ختم نہ ہوجائےاورجب اس کی یہ بیماری ختم ہوجائے پھراس کومسجدمیں آنےسےنہ روکے
نـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــوٹ👇
اگرپریشانی زیادہ ہوتب یہ حکم ہےاوراکثرایساہی ہوتاہوں اس کےساتھ تب ورنہ گھرپہ نہ پڑھےمسجدمیں جاکراداکریں 

                  عام کتب فقہ 

              واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب

                افسررضاحشمتی سعدی

                اسلامی معلومات گروپ 

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے