مرحومین کو دفن کرنے سے پہلے ایصال ثواب کرنا کیسا ہے


           السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ

کیافرماتےہیں علماء دین اس مسئلہ میں کہ زیدکا انتقال کیے ایک ماہ تیس دن ہوگئے لیکن اب تک نہ نماز جنازہ ہوئی نہ ہی دفن کیا گیا ہے_توکیا انکا دسواں بیسواں چالیسواں کرسکتے ہیں؟ یانہی

الســــاٸل مولانا محمد آصف رضا مجھن پور کوشامبی
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
           وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

               الجوابـــــ بعون الملکـــــ الوھاب

 اول تو یہ کہ جہاں انتقال ہوا وہی دفن کر دینا چاہئے اتنے دن لاش کو روکنا شریعت کے خلاف ہے حدیث شریف میں پیارے آقا ﷺ ارشاد فرماتے ہیں کہ’’ وَتَجْهِيزُ الْمَيِّتِ إِذَا مَاتَ ‘‘ترجمہ: جب فوتگی ہوجائے تو مردے کو دفنانے میں جلدی کر کیا کرو۔رہی بات تیجہ دسواں بیسواں چالیسواں کی تو جائز ہے اگر چہ ابھی مردہ دفن نہ کیا گیا ہو کیونکہ ایصال ثواب کے لئے موت شرط نہیں ہے کوئی بھی اپنی زندگی میں ایصال ثواب کر سکتا ہے جیسا کہ سرکار اعلیٰ حضرت مجدد دین ملت الشاہ امام احمد رضا خان بریلوی علیہ رحمہ اپنی کتاب فتاویٰ رضویہ میں تحریر فرماتے ہیں کہ اموات مسلمین کو ایصال ثواب ہر تاریخ میں جائز ہے(حوالہ فتاویٰ رضویہ جلد 4 صفحہ نمبر 162)(ماخوذ از بستر علالت سے قبر تک صفحہ نمبر 107) لہذا صورت مسئولہ میں تیجہ دسواں وغیرہ کرسکتے ہیں 

               واللہ تعالیٰ اعلم باالــــــصـــــواب

    کتبـــــــــــــــــــــــــہ ناچیز محمد شفیق رضا رضوی 

الجواب صحیح فقیر تاج محمد حنفی قادری واحدی ارشدی اترولوی

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے