3.09.2020

اللّٰہ صاحب کہنا از روئے شرع کیســـاھے


            السلام علیکم و رحمتہ اللہ و برکاتہ

کیا فرماتے ہیں علماٸے کرام و مفتیان کرام اس مسٸلہ کے بارے میں کہ اللّٰهُ تبارک و تعالی کو اللہ صاحب کہنا کیسا ہے_____بحوالہ جواب سے نوازیں____


     الســــاٸل محــمد شــعیب رضــا قــادری بنــارسی
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
           وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ
  
             الجوابـــــ بعون الملکـــــ الوھاب

 سرکار اعلی حضرت رضی اللہ عنہ سے عرض کیا گیا کہ اللہ تعالیٰ کے لئے صاحب کا لفظ بولنا کیسا ہے تو ارشاد فرمایا جائز ہے حدیث شریف میں ہے اللھم انت الصاحب فی سفر والخلیفۃ فی الاھل المال ترجمہ ائے اللّٰه سفر کا ساتھی تو ہے اور اہل و عیال اور مال کا خیال رکھنے والا تو ہے. اور سرکار مصطفیٰ ﷺ کے لئے تو قرآن میں صاحب فرمایا گیاما ضل صاحبکم وماغوٰی ترجمہ کنزالایمان تمھارے صاحب نہ بہکے نہ بے راہ چلےاور دوسری جگہ ارشاد ہوتا ہے کہ وما صاحبکم بمجنون ترجمہ کنزالایمان اور تمھارے صاحب مجنون نہیں. لیکن اللّٰه صاحب کہنا اسمٰعیل دہلوی کا محاورہ ہے اور حضور ﷺ یقیناً ہمارے صاحب ہے مگر نام پاک کے ساتھ صاحب کہنا آرایہ و پادریوں کا محاورہ ہے اس لئے نہ چاہیئے
(پھر فرمایا) آرایہ پادری وہابیہ سب ایک ہیں. *(الملفوظ ح سوم ٣٢٧/٣٢٩)*خلاصہ کلام یہ ہے کہ جائز ہے مگر وہابیوں کی مشابہت کی وجہ سے نہ کہیں

               واللہ تعالیٰ اعلم باالــــــصـــــواب 

    کتبـــــــــــــــــــــــــہ ناچیز محمد شفیق رضا رضوی

               اســـلامی مـــعلــومـات گـــــروپ 

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only