4.05.2020

بٹائی میں جانوروں کو دینا از روئے شرع کیسا ہے


           السَلامُ عَلَيْكُم وَرَحْمَةُ اَللهِ وبرکاتہ 

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ بکریوں کا ادھیا بٹيا پر دینا یا لینا کیسا؟برائے مہربانی جواب عنایت فرمایں عین نوازش ہوگی

    (سائل محمد قُطب ا لدین رضوی بلرام پوری)
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
            وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

               الجوابـــــ بعون الملکـــــ الوھاب

بکری کا بٹائی پر دینا اور لینا جائز نہیں حضرت صدر الشریعہ علیہ رحمۃ الرضوان تحریر فرماتے ہیں کہ بعض لوگ بکری بٹائی پر دیتے ہیں کہ جو کچھ بچے پیدا ہوں گے دونوں نصف نصف لینگے یہ اجارہ بھی فاسد ہے بچے اسی کے ہیں جس کی بکری ہے دوسرے کو اسے کام کی اجرت مثل ملے گی (بہار شریعت حصہ 4 صفحہ نمبر 140) اور درالمختار جلد 3 صفحہ نمبر 387 پر ہے اذا رفع البقرۃ بالعلف لیکون الحارث بینھما نصفین فما حدث فھو لصاحب البقرۃ ھو الأخر مثل علقہ واجر مثلہ تاتار خانیتہ(بحوالہ فتاویٰ فقیہ ملت جلد دوم صفحہ نمبر 229)

                واللّٰہ ورسولہ اعلم باالصواب

کتبہ ناچیز محمد شفیق رضا رضوی خطیب و امام سنّی مسجد حضرت منصور شاہ رحمت اللہ علیہ بس اسٹاپ کشن پور الھند

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only