4.04.2020

کافر کو زکوٰۃ دینا از روئے شرع کیسا ہے


              اَلسَلامُ وعَلَيْكُم وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ‎

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ کیا کسی کافر کو زکوٰة دے سکتے ہیں؟ یا نہیں برائے مہربانی مکمل طور پر جواب عنایت فرمائیں عین نوازش ہوگی 

              محمد سرور قادری۔راےبریلی
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
            وعلیکم السلام ورحمةاللہ وبرکاتہ
  
                الجواب۔بعون الملک الوھاب

کسی بھی کافرکوزکواة دینا جائزنہیں ۔جیساکہ حضورصدرالشریعیہ بدرالطریقہ علامہ مفتی محمدامجدعلی اعظمی علیہ الرحمةوالرضوان تحریرفرماتےھیں کہ ذمی کافرکونہ زکاة دے سکتےہیں نہ کوئ صدقہ واجبہ جیسے نذر و کفارہ وصدقہ فطر ۔اورکافر حربی کو کسی قسم کا صدقہ دینا جائزنہیں نہ واجبہ نہ نافلہ اگرچہ وہ دارالاسلام میں بادشاہ اسلام سے امان لےکرآیاہو(۔بہارشریعت جلداول حصہ پنجم صفحہ ٦٣)اوردرمختارمع شامی جلددوم صفحہ ٦٧ پرہے ،، اما الحربی ولومستامنا فجمیع الصدقات لاتجوز له اتفاقا بحرعن الغایة وغیرھا (۔فتاوی فیض الرسول جلداول صفحہ ٥٠١) 
               وھوسبحانہ تعالی اعلم بالصواب 
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
کتبه العبد محمد عتیق اللہ صدیقی فیضی یارعلوی ارشدی عفی عنہ دارالعلوم اھلسنت محی الاسلام بتھریاکلاں ڈومریا گنج سدھارتھنگر یوپی (٨ شعبان المعظم ١٤٤١ ھ ٣ اپریل ٢٠٢٠ ء) 

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only