4.11.2020

شئیر بازار میں پیسے لگانا از روئے شرع کیسا ہے

           السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام ومفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ لوگ شیر بازار میں پیسے لگاتے ہیں یہ حلال ہے یا حرام؟برائے مہربانی جواب عنایت فرمایں عین نوازش ہوگی 

               عبدالغنی رضوی مہاراشٹر
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
            وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

               الجواب بعون الملک الوہاب

شیربازار کاکاروبارکرناجائزنہیں ہےکہ اس میں اپنے روپےکاحصہ دوسرےکےہاتھ بیچااورخریداجاتاہےاوریہ دونوں باتیں حرام ہیں جیساکہ سرکاراعلیٰ حضرت فاضل بریلوی ربہ القوی فرماتے ہیں اپنے روپےکاحصہ دوسرےکےہاتھ خریدنااوربیچنادونوں حرام ہیں (فتاوی رضویہ شریف جلد ہشتم صفحہ 371 کتاب الشرکۃ قدیم)(بحوالہ فتاوی مرکزتربیت افتاجلددوم صفحہ 239)مزید تفصیل کیلئے اورمکمل تشفی کیلئےمحقق مسائل جدیدہ کی کتاب شیربازارکےمسائل کامطالعہ فرمائے

                   واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب 

             کتبہ محمدافسررضاسعدی عفی عنہ 

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only