4.04.2020

مردے کے ناخن کاٹنا از روئے شرع کیسا ہے


            السلام علیکم و رحمۃ اللہ وبرکاتہ. 

کیا فرماتے ہیں علماء کرام و مفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ میت کے ناخن کاٹنا کیسا ہے مع حوالہ جواب عنایت فرمائیں عین نوازش ہوگی 

             سائل : محمد مجیر اسلام رضوی.
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
        وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ تعالیٰ وبرکاتہ 

                 الجواب بعون الملک الوہاب  

میت کے ناخن کاٹنا ناجائز و مکروہ تحریمی ہے - جیساکہ حضور صدر الشریعہ بدر الطریقہ علیہ الرحمۃ والرضوان بھار شریعت میں تحریر فرماتے ہیں کہ " میت کی داڑھی یا سر کے بال میں کنگھا کرنا یا ناخن تراشنا یا کسی جگہ کے بال مونڈنا یا کترنا یا اکھاڑنا ناجائز و مکروہ تحریمی ہے بلکہ حکم یہ ہے کہ جس حالت پر ہے اسی حالت میں دفن کردیں ہاں اگر ٹوٹا ہو تو لے سکتے ہیں اور اگر ناخن یا بال تراش لئے تو کفن میں رکھ دیں " اھ( ح:4/ص:816/ کفن کا بیان / مجلس المدینۃ العلمیۃ دعوت اسلامی) اور فتاوی ھندیہ میں ہے کہ " ولا یسرح شعر المیت ولا لحیتہ ولا یقص ظفرہ ولا شعرہ کذا فی الھدایۃ ولا یقص شاربہ ولا ینتف ابطہ ولا یحلق شعر عانتہ و یدفن بجمیع ما کان علیہ کذا فی محیط السرخسی " اھ( ج:1/ص:158/ الفصل الثانی فی الغسل / بیروت ) اور درمختار میں ہے کہ "( ولا یسرح شعرہ) أی یکرہ تحریما (ولا یقص ظفرہ) الا المکسور ( ولا شعرہ) " اھ اور ردالمحتار میں ہے کہ " ( أی یکرہ تحریما) لما فی القنیۃ من ان التزئین بعد موتھا والامتشاط و قطع الشعر لا یجوز - نہر - فلو قطع ظفرہ أو شعرہ أدرج معہ فی الکفن - قہستانی عن العتابی " اھ( ج:3/ص:89/ کتاب الصلاۃ / باب صلاۃ الجنازۃ دار عالم الکتب ) 

                 واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب 

کتبہ اسرار احمد نوری بریلوی خادم التدریس والافتاء مدرسہ عربیہ اہل سنت فیض العلوم کالا ڈھونگی ضلع نینی تال اتراکھنڈ

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only