نماز تراویح میں تشہد کے بعد سلام پھیرنا کیسا ہے

             السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

آپ کی بارگاہ میں میرا سوال ہے کہ کیا تراویح کی نماز میں ہر پہلی رکعت میں تعوذ و تسمیہ پڑھنا ضروری ہے۔۔ نیز تشہد کے بعد سلام پھیر سکتے ہیں یا نہیں۔۔براۓ کرم قرآن و حدیث کی روشنی میں جواب عنایت فرمايں ۔ مع حوالہ ۔

     محمد شفاعت رضا خان ۔جموں و کشمیر
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
        وَعَلَيْكُم السَّلَام وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ‎

            الجواب بعون الملک الوھاب۔۔۔

تراویح سمیت ہر نماز کی پہلی رکعت میں تعوذ و تسمیہ کا پڑھنا ۔۔اور ہر رکعت کے شروع میں صرف تسمیہ پڑھنا مسنون ہے ۔ضروری نہیں۔۔۔ لہذا تراویح ہو یا کوٸی بھی نماز ان کا ترک مکروہ ہے ۔تشہد کے بعد درود شریف اور دعا کا پڑھنا بھی سنت ہے ۔ہاں اگر مقتدیوں پر گرانی ہو تو تشہد کے بعد اللہم صل علی محمد وعلی آل محمد پر اکتفا کر سکتا ہے۔ایسے ہی بہار شریعت ،حصہ چہارم میں ہے۔

              واللہ تعالی اعلم بالصواب 

کتبہ : محمد کلیم نوری ،استاذ مدرسہ اسلامیہ اہل سنت حشمت العلوم رامپور کٹرہ ،بارہ بنکی

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے