گانے کے طرز پر نعت پڑھنا کیسا ہے؟

               اَلسَّــلَامْ عَلَيْكُم وَرَحْمَةُ اللہِ وَبَرَڪَاتُہْ  
       
کیا فرماتے ہیں علماٸے کرام و مفتیان کرام اس مسٸلہ ذیل کے بارٸے میں کہ گانے کے طرز میں نعت شریف یا کلام یا منقبت وغيرہ پڑھنا کیسا ہے بحوالہ۔جواب عنایت فرماکر شکریہ کا موقع عنایت کریں

السـاٸل / محــمد قمـــرالدین قـــادری بمقام گیناپور ضلــع بہراٸچ شــریف یوپی
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
       وَعَلَیْڪُمْ اَلسَّــلَامْ وَرَحْمَةُ اللہِ وَبَرَڪَاتُہْ

            الجـواب بعـون المــلـک الوھـاب

صورت مستفسرہ کا جواب ملاحظہ ہو کہ گانے کے طرز پر نعت شریف یا منقبت وغیرہ پڑھنا جائز نہیں ہے منع ہے جیسا کہ مولنا تطہیر احمد صاحب قبلہ اپنی کتاب غلط فہمیاں اور انکی اصلاح میں تحریر فرماتے ہیں کہ گانوں کی طرز پر حمد و نعت و منقبت وغیرہ پڑھنا منع ہے جو لوگ ایسا کرتے ہیں انہیں ان حرکات سے باز رہنا چاہئے اور مسلمانوں کو چاہئے کہ ایسے لوگوں سے ہرگز نظمیں نہ سنیں اعلی حضرت قدس سرہ تحریر فرماتے ہیں کہ اگر گانے کی طرز پر راگنی کی ریاعت ہو تو ناپسند ہے کہ یہ امر ذکر شریف کے مناسب نہیں(فتاوی رضویہ شریف جلد 10 قسط 2 ص 185) (بحوالہ غلط فہمیاں اور انکی اصلاح ص 127)

               واللہ تعالی اعلم باالصواب

کتبــــــــــــــہ مـــولانــا انـــیـــس الـرحـمــن حـنــفی رضـوی صــاحــب 

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے