سجدہ سہو کرنا بھول جائے تو کیا حکم ہے؟؟؟

               اَلسَلامُ عَلَيْكُم وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ‎

کیا فرماتے ہیں علماٸے دین و مفتیانِ شرع متین اس بارے میں کہ دورانِ نماز کچھ ایسا ہوا جس سے سجدہ سہو واجب ہوگیا۔ اب اسے رکعات مکمل کرکے اخیر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک سلام پھیرنے کے بعد سجدہ سہو کرنا ہے لیکن وہ شخص سجدہ سہو کرنا بھول گیا اور درودِ ابراہیمی آدھی یا مکمل پڑھ لی تو اب اسے یاد آیا کہ سجدہ سہو کرنا ہے۔ اب وہ شخص کیا کرے ؟ سجدہ سہو کریگا یا دوبارہ لوٹاٸے گا ؟ اور یہ بھی ارشاد فرما دیں کہ اگر دعاٸے ماثورہ پڑھنے کے بعد یاد آٸے تو کیا حکم ہوگا ؟مہربانی فرماکر مع حوالہ جواب عنایت کریں

ساٸل ایم۔ کے۔ رضا صدیقی اسمٰعیلیدارالعلوم اھلِسنّت ضیاٸے رضا، الجامعة الاسمٰعیلیہ، مسولی شریف، ضلع بارہ بنکی، یوپی، الھند
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
        وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

            الجواب بعون الملک الوہاب 

یاد آنے پر اسی وقت سجدہ سہو کرلے یا درود ابراہیمی پڑھ کر سجدہ سہو کرے جب بھی نماز ہوجائے گی یہاں تک کہ بھول سے دونوں طرگ سلام پھیرنے کے بعد سجدہ سہو یاد آگیا اور کوئی فعل منافی نماز نہیں کیا ہے تو اب بھی سجدہ سہو کرلے اور تشہد پڑھ کر سلام پھیردے نماز ہوجائےگی لوٹانے کی حاجت نہیںخزانة المفتين ميں شرح مختصر امام طحاوی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ سے ہے عليه سجدة من صلب الصلوة سلم وهو ناس لها ثم تذكر فانه بهذاالسلام لا يخرج عن حرمة الصلوة بالاجماع حتى صح الاقتدا٫ وان عاد الامام وسجد يسجد هذاالمقتدى معه على طريق المتابعة ولا يعتد بهذه السجدة لانه لم يدرك الركوع ويتشهد مع الامام ولا يسلم اذا سلم الامام ويسجد سجدتى السهو مع الامام فاذا سلم الامام ثانيا لا يسلم هو ايضا بل يقوم الى قضا٫ ماسبق (خزانة المفتين) ایسی فتاویٰ رضویہ شریف ج ۸/ ص ۱۸۷/ میں بھی ہے 

               واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب 

کــتـــــــــــه: خاکسار ابو حامد محمد شریف الحق مدنی رضوی ارشدی کٹیہاری امام وخطیب نوری رضوی جامع مسجد وخادم دارالعلوم نوریہ رضویہ رسول گنج عرف کوئلی ضلع سیتامڑھی بہار الھـــــــند ( موبائل نمبـــــر 7654833082)

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے