کیا تین دن کا اعتکاف ہو سکتا ہے؟؟؟


           
                 السلام علیکم ورحمۃللہ وبرکاتہ 

کیا جامع مسجدمیں رمضان کے آخری عشرے میں تین دن کا اعتکاف ہو سکتا ہے اور اس سے سنت کفایہ اداہو جاۓ گا

                السا ئل محمد علی حسن
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
          وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ 

              الجواب بعون الملک الوہاب 

پورے عشرۂ اخیرہ (چاہے نو دن ہوں یا دس دن) کا اعتکاف سنت مؤکدہ ہے ایک دن بھی کم ہوا تو سنت اعتکاف نہیں ہوگا - ردالمحتار میں ہے کہ المسنون ھو اعتکاف العشر بتمامہ " یعنی سنت اعتکاف وہ رمضان کا پورا عشرہ ہے " اھ( ج:2/ص:143/ باب الاعتکاف / مصطفی البانی مصر) اور امام اہل سنت مجدد دین و ملت امام احمد رضا خان علیہ رحمۃ الرحمان فرماتے ہیں کہ  اعتکاف عشرۂ اخیرہ کی سنت مؤکدہ علی وجہ الکفایۃ ہے جس پر حضور پر نور سید عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے مواظبت (ہمیشگی) فرمائی پورے عشرۂ اخیرہ کا اعتکاف ہے ایک روز بھی کم ہو تو سنت ادا نہ ہوگی ہاں اعتکاف نفل کے لئے کوئی حد مقرر نہیں ایک ساعت کا بھی ہوسکتا ہے اگرچہ بے روزہ ہو ولہذا چاہیے کہ جب نماز کو مسجد میں آئے نیت اعتکاف کرلے کہ یہ دوسری عبادت مفت حاصل ہوجائے گی " اھ( ج:10/ص654/ رضا فاؤنڈیشن لاہور ) بحوالہ احکام تراویح و اعتکاف ص:124/125

               واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب 

کتبہ اسرار احمد نوری بریلوی خادم التدریس والافتاء مدرسہ عربیہ اہل سنت فیض العلوم کالا ڈھونگی ضلع نینی تال اتراکھنڈ 25---مئی ---2020---بروز جمعہ

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے