6.20.2020

نماز میں قرآت کے دوران درود شریف پڑھ دیا تو کیا حکم ہے


                 ,السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ اگر امام نے قراءت میں یہ والی آیت تلاوت کی ما کان محمد ابا احد " اور مقتدی کے منہ سے بے ساختہ درود شریف نکل گیا تو نماز کا کیا حکم ہے؟

               سائل محمد اکرم شیخ فتحپور الھند
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
                  وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاتہ

                   الجوابـــــ بعون الملکـــــ الوھاب 

صورت مستفسرہ میں نماز ہوجائےگی ہاں اگر بالقصد درود پاک پڑھا ہوتا تو نماز فاسد ہوجاتی جیساکہ مصنف بہار شریعت حضور صدر الشریعہ رضی المولی تعالی عنہ نے اپنی شہرہ آفاق تصنیف "بہار شریعت حصہ سوم ص٦٠٦تحریر فرمایا"اللہ عز وجل کا نام مبارک سنکر جل جلالہ کہا یانبی صلی اللہ علیہ وسلم کا اسم مبارک سنکر درود پڑھایا امام کی قرات سنکر صدق اللہ وصدق رسولہ کہا تو ان سب صورتوں میں نماز جاتی رہی جبکہ بقصد جواب کہا ہواور اگر جواب میں نہ کہا تو حرج نہیں

                واللہ تعالی اعلم بـاالـــــــصـــــــــواب 

     کتبہ محمد مزمل حسین نوری مصباحی کشن گنج بہار 

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only