کیا مال دوگنا سے زائد دام پر بیچنا جائز ہے؟؟؟


                السلام علیکم ورحمۃاللہ وبرکاتہ!

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ کوئی سامان دوگنا دام سے زیادہ دام پر بیچنا جائز ہے یا نہیں؟ مع حوالہ جواب عنایت فرمائیں

        سائل محمد شاکر رضوی جہاں آباد یو پی
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
              وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ وبرکاتہ 

                الجوابـــــ بعون الملکـــــ الوھاب 

بائع (بیچنے والے) کو اختیار ہے کہ اپنے مال کو کم دام میں بیچے یا زیادہ اس میں از روئے شرع کوئی ممانعت نہیں مگر جھوٹ, دغا, فریب کاری اور مکاری شامل نہ ہو جیساکہ حضور صدر الشریعہ بدر الطریقہ علیہ الرحمۃ والرضوان فتاوی امجدیہ میں تحریر فرماتے ہیں کہ ہر شخص کو اختیار ہے کہ اپنی چیز کو کم یا زیادہ جس قیمت پر مناسب جانے بیع کرے تھوڑا نفع لے یا زیادہ شرع سے اسکی ممانعت نہیں " اھ (ج:3/ص:181)

          واللہ تعالیٰ اعلم بـاالـــــــصـــــــــواب 

کتبہ اسرار احمد نوری بریلوی خادم التدریس والافتاء مدرسہ عربیہ اہل سنت فیض العلوم کالا ڈھونگی ضلع نینی تال اتراکھنڈ 5---جون ---2020---بروز جمعہ

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے