7.02.2020

کیا دوران تکبیر سر گھمانا ضروری ہے؟


                   السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ

ایک سوال عرض ہے کہ جس طرح اذان میں حی علی الصلوٰۃ اور حی علی الفلاح پر سر گھماتے ہیں کیا اسی طریقے سے تکبیر میں بھی ہے کہ حی علی الصلوٰۃ /علی الفلاح پر دائیں اور بائیں جانب سر گھمائیں اور نیز یہ بھی واضح کردیں کہ جس طرح اذان کو دہرانے کا حکم ہے اسی طرح تکبیر کا بھی حکم ہے جو اب دلائل کے ساتھ دیں مہر بانی ہوگی۔

                   سائل : ابوبکر رضوی الھند 
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
                   وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ

                    الجواب بعون الملک الوھاب 

جی ہاں جس طرح اذان میں کرتے ہیں ویسا ہی اقامت میں بھی کرنے کا حکم ہے فتاویٰ رضویہ میں ہےعلماء نے اقامت میں بھی دہنے بائیں منہ پھیرنے کا حکم دیا ہے اور بعض نے اسے اس صورت کے ساتھ خاص کیا ہے کہ کچھ لوگ ادھر ادھر منتظر اقامت ہوں درمختار میں ہے ویلتفت فیہ وکذا فیھا مطلقاً قنیہ میں ہے الاصح ان الصلاۃ عن یمینہ والفلاح عن شمالہ مت تنم قع ضح والاقامۃ کذلک اھ  (ج : 2، ص : 416/392) قدیم 

                   واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب 

کتبہ عبدالستار رضوی خادم ارشدالعلوم عالم بازار کلکتہ- ٩،ذیقعدہ ١٤٤١ھ بمطابق یکم جولائی ٢٠٢٠ء

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only