7.06.2020

کیا تین چھوٹی آیت سے نماز ادا ہو جاتی ہے


                  السلامُ علیکم و رحمۃ اللّٰہ و برکاتہ۔

سوال حالاتِ حاضرہ میں امام نے فجر کی پہلی رکعت میں صرف چھوٹی چھوٹی 3 آیات پڑھائی اور دوسری رکعت میں بھی ویسے ہی پڑھایا جب کہ پڑھنے والے صرف تین لوگ تھے تو کیا اس صورت میں نماز ہو درست ہے شریعت کی روشنی میں جواب عنایت فرمائیں- 
               سائل✍عارف رضا کانپوری یوپی
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
             وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

                    الجواب بعون الملک الوہاب

فرض کی پہلی اور دوسری رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد ایک بڑی آیت یا تین چھوٹی آیت کا پڑھنا واجب ہے جیسا کہ فقیہ اعظم ہند حضور صدر الشریعہ علیہ الرحمہ فرماتے ہیں کہ فرض کی پہلی دو رکعتوں میں اور سنت و نفل کی ہر رکعتوں میں سورت ملانا یعنی ایک چھوٹی سورت جیسے اِنَّآ اَعْطَیْنٰکَ الْکَوْثَرَط یا تین چھوٹی آیتیں جیسے ثُمَّ نَظَرَلا ثُمَّ عَبَسَ وَبَسَرَ لا ثُمَّ اَدْبََرَ وَاسْتَکْبَرَ یا ایک یا دو آیتیں تین چھوٹی آیت کے برابر پڑھنا۔ واجب ہے {بہار شریعت حصہ سوم واجبات نماز }چونکہ امام نے تین چھو ٹی آیتوں کی تلاوت کی ہے اس لئے نماز بلاکراہت ہوگئی اور مقتدی کا کم یا زیادہ ہونا قرأت کے لئے شرط نہیں ہے.

                        والله تعالیٰ اعلم بالصواب 

کتبہ محمد معصوم رضا نوری 12ذی القعدہ 1441ھ 4جولائی 2020ء بروز سنیچر

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only