بڑے جانور کی اکیلے قربانی کرنا کیسا

Gumbade AalaHazrat

سوال
  کیا فرماتے ہیں علمائے اس مسئلہ کے بارے میں اگر کوئی شخص اکیلا ایک گائے کی قربانی دینا چاہتا ہے صرف ایک نام سے تو اس کی قربانی ہوگی یا نہیں المستفی عاقب رضاچریانی

       جواب

بالکل قربانی ہو جائگی کیونکہ بڑے جانور مثلاً گائے بھینس اور اونٹ وغیرہ کی قربانی ایک آدمی بھی کر سکتا ہے البتہ اتنا ضرور ہے کہ اس پورے بڑے جانور کی قربانی سے واجب ہی ادا ہوگا یہ نہیں کہ ساتواں حصہ واجب ہو باقی نفل
جیساکہ صاحب بہار شریعت حضور صدر الشریعہ بدر الطریقہ حضرت علامہ ومولانا مفتی محمد امجد علی اعظمی علیہ الرحمہ بہار شریعت میں فرماتے ہیں کہ ایک سے زیادہ قربانی کی سب قربانیاں جائز ہیں ایک واجب باقی نفل اور اگر ایک پوری گائے قربانی کی تو پوری سے واجب ہی ادا ہوگا یہ نہیں کہ ساتواں حصہ واجب ہو باقی نفل بہار شریعت جلد 3 حصہ:15 صفحہ 352 قربانی کے جانور کا بیان مطبوعہ دعوت اسلامی
اور حضور فقیہ ملت حضرت علامہ ومولانا مفتی محمد جلال الدین احمد امجدی علیہ الرحمہ اسی طرح کے سوال کے جواب میں فتاوی فیض الرسول میں تحریر فرماتے ہیں کہ پوری بھینس بچے کے نام عقیقہ کرسکتے ہیں کہ اسکا حکم مثل قربانی کے ہے اور قربانی کے بڑے جانور کو ایک شخص کے نام کرنا جائز ہے کما فی الکتب الفقھیۃ

فتاوی فیض الرسول جلد 2 صفحہ 464 قربانی کا بیان
واللہ ورسولہ اعلم بالصواب 

کتبہ غلام حضور تاج الشریعہ محمد راحت رضا نیپالی

مقام استاد جامعہ غوثیہ ضیاءالعلوم بابا گنج بہرائچ

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے