کیا عقیقہ صرف صبح ہی کر سکتے ہیں

Gumbade AalaHazrat

سوال
  علماء کرام سے ایک بہت ضروری سوال یہ کہ بعض لوگوں کا کہنا ہے کہ عقیقہ صبح کے وقت سورج نکلنے سے پہلے ہونا چاہیے کیا اور اوقات میں عقیقہ نہیں ہوگا پلیز جلدی جواب عنایت فرمائیں المستفی محمد افسر رضا

       جواب

جو لوگ کہتے ہیں صبح سورج نکلنے سے پہلے عقیقہ ہونا چاہیے یہ ان کی منشاء ہے وبس شریعت میں اس کی کوئی حقیقت نہیں عقیقہ کبھی کبھی بھی کسی بھی وقت کرسکتے ہیں کوئی شرعی قباحت نہیں ہاں رات میں عقیقہ کرنا (جانور ذبح) مکروہ تنزیہی ہے خلاف اولی ہے چونکہ رات میں جانور ذبح کرنا اندیشہ غلطی کے باعث مکروہ ہے اور اگر لائٹ وغیرہ کا مکمل طور پر انتظام میں تو رات میں عقیقہ کرنے میں کوئی حرج نہیں
حضور اعلی حضرت امام احمد رضا خان فاضل بریلوی علیہ الرحمہ فرماتے ہیں رات کو (جانور) ذبح کرنا اندیشہ غلطی کے باعث مکروہ تنزیہی خلاف اولی ہے۔ اور ضرورت واقع ہو مثلا صبح کے انتظار میں جانور مر جائے گا تو کچھ کراہت نہیں لانہ الاٰن مأمور به حذرا عن اضاعة المال اھ کیونکہ مال کے ضائع ہونے کے خطرہ کی بناء پر وہ اب اس کا مامور ہے۔اھ ت) پھر کراہت اس فعل میں ہے ذبح اگر صحیح ہو جاۓ ذبیحہ میں کچھ کراہت نہیں لتبین ان الغلط لم يقع واضح ہو جانے پر کہ غلطی نہ ہوئی
در مختار میں ہے کره تنزيها الذبح ليلا لاحتمال الغلط غلطی کے احتمال کی وجہ سے رات کو ذبح کرنا مکروہ تنزیہی ہے

( فتاوی رضویہ مترجم جلد ۲۰ صفحہ ۲۱۳)
واللہ ورسولہ اعلم بالصواب 

کتبہ فقیر محمد معصوم رضا نوریؔ ارشدی عفی عنہ

۲ ذی الحجہ ۱۴۴۳ ھجری ۲ جولائی ۲۰۲۲ عیسوی شنبہ

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے