شادی میں ہلدی یا ابٹن لگانا کیسا ہے




   ❂اَلسَّــلَامْ عَلَیْڪُمْ وَرَحْمَةُ اللہِ وَبَرَڪَاتُہْ❂

                      الســـــــــــــــــوال

   زید کا سوال ہے کہ شرمگاہ پر حلدی لگانا کیسا ہے؟ شادی میں جو لگایا جاتا ہے پھر مرد کو یہ کہا جاتا کی روم میں اکیلے جا کر شرمگاہ اور تمام جگہ لگاؤ یہ سب کرنا کیسا ہے ایسی بہت سی جگہ پر جہالت ہے

  ❂وَعَلَیْڪُمْ اَلسَّــلَامْ وَرَحْمَةُ اللہِ وَبَرَڪَاتُہْ❂  

   📚 الجواب اللھم ھدایۃ الحق والصواب👇

ہلدی اور ابٹن جس کو بعض جگہ بکوا کہتے ہیں لگانا جائز ہے مگر ضروری نہیں شادی ہو یا غیر شادی البتہ بالغ عورت سے لگوانا ناجائز وحرام ہے یہاں تک کہ ماں بھی بدن کو ہاتھ نہیں لگا سکتی اعلی مجدد اعظم امام احمد رضا خان علیہ الرحمتہ والرضوان سے پوچھا گیا کہ دولھے کو ابٹن لگانا اور اس موقع پر گڑ تقسیم کرنا کیسا ہے تو جواب میں ارشاد فرمایاکہ ابٹن ملنا جائزہے اور کسی خوشی پر گڑ کی تقسیم اسراف نہیں اور دولھا کی عمر نو دس سال کی ہو تو اجنبی عورتوں کا اس کے بدن میں ابٹن ملنا بھی گناہ وممنوع نہیں۔ ہاں بالغ کے بدن میں نامحرم عورتوں کا ملنا ناجائز ہے اور بدن کو ہاتھ تو ماں بھی نہیں لگاسکتی یہ حرام اور سخت حرام ہے

📗 (فتاوی رضویہ جلد ٢٢/ص ٢٤٥.مترجم)
             
          والـــلـــہ اعـــــــلـــم بـــالصــــواب

✍ از قــلـــم حـضــرت عــلامـہ و مــولانــا تــــــــاج مـــحــــمــــد حـــنــفـــی قــــــادری واحـــدی اتـــرلــوی صـاحب قـبــلہ مـد ظـلــہ 

 { اســـلامـی معـلــومـات گـــــــروپ }

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے