3.10.2020

جو امام وہابیوں سے تعلقات رکھتا ہو اسکے پیچھے نماز ادا کرنا کیسا ہے


.              السلام علیکم و رحمتہ اللہ و برکاتہ

 علماء کی بارگاہ میں عرض یہ ہے کہ ایک سنی مسجد کا امام وہابی کے ساتھ چائے پیتا ہے اس سے بات چیت کرتا ہے تو کیا یا اس کے پیچھے نماز جائز ہے حوالہ کے ساتھ جواب عنایت فرمائیں عین نوازش ہوگی.

               الســــاٸل محمد رضوان رضوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
            وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

                  الجواب بعون الملک الوہاب 

اگر وہ امام کسی حکمت کے تحت ایسا کرتا تو یا کسی مجبوری کے تحت تو دور حاضر میں اسکی اجازت ہے اور اگر ایسا نہیں بلکہ ان سے محبت کرتا ہے تو ایسےامام کےپیچھےنماز پڑھنامکروہ تحریمی واجب الاعادہ ایسےشخص کومنصب امامت سےمعزول کردیں جیساکہ فتاوی مرکزتربیت افتاء میں مفتی اجمل حسین فرماتے ہیں جوشخص دیوبندیوں سےسلام کلام کرےاورانکے یہاں کھائےپیئے اوران سےتعلقات رکھےتووہ شخص کم ازکم فاسق معلن ضرورہے اس کےپیچھےنمازمکروہ تحریمی واجب الاعادہ ہےایسےشخص کومنصب امامت سےمعزول کردیں جیساکہ سرکار اعلیٰ حضرت عظیم البرکت فاضل بریلوی ربہ القوی فرماتے ہیں کہ فاسق معلن کوامام بناناگناہ اوراس کےپیچھے نمازمکروہ تحریمی کہ پڑھنی گناہ اورپھیرنی واجب فتاوی رضویہ شریف قدیم جلدسوم صفحہ 252اورغنیۃ المستملی صفحہ 513میں ہے وقدموافاسقایأثمون اورردالمختارجلداول صفحہ 560پر ہےلاینبغی ان یقتدی بالفاسق بحوالہ فتاوی مرکزتربیت افتاء جلداول صفحہ 206

                   واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب 

         کتبـــــــــــــــــــــــــہ محمدافسررضاحشمتی

              اســـلامی مـــعلــومـات گـــــروپ 

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

Whatsapp Button works on Mobile Device only