3.10.2020

دوران آذان قرآن وحدیث کی بات کرنا کیسا ہے؟؟؟


            _اَلسَلامُ عَلَيْكُم وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ‎_

_علماۓ کرام ومفتیان عظام کی بارگاہ میں سوال عرض ہیکہ کیا کوٸ عالم دین اذان کے دوران قرآن وحدیث کی بات کرسکتے ہیں یا نہیں اگر کر سکتے ہیں تو اس کی دلیل کیا ہے_ 

        _ساٸل محمد منور عالم مدھےپوری بہار_
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
         وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ تعالیٰ وبرکاتہ

                الجواب بعون الملك الوھاب

اذان کے دوران کوئی بھی بات نہ کی جائے یہاں تک کہ قرآن مجید کی تلاوت بھی موقوف کردی جائےجیسا کہ حضور صدر الشریعہ علیہ الرحمہ تحریر فرماتے ہیں جب اذان ہو تو اتنی دیر کے لئے سلام کلام اور جواب سلام تمام اشغال موقوف کردے یہاں تک کہ قرآن مجید کی تلاوت میں اذان کی آواز آئے تو تلاوت موقوف کردے اور اذان کو غور سے سنے اور جواب دےاگے فرماتے ہیں۔۔ جو اذان کے وقت باتوں میں مشغول رہے اس پر معاذاللہ خاتمہ برا ہونے کا خوف ہے{بہار شریعت جلد اول حصہ سوم صفحہ نمبر 31}ہاں اگر کوئی فقیہ ہے اور وہ اس منصب پر فائز ہےپھر فتوی لکھنے میں مشغول ہے تو انھیں اجازت ہے اس کی تفصیل کتب فقہ میں دیکھیں یاپھرکسی بستی میں کئی مسجدیں ہیں اور ان میں یکے بعد دیگرے اذانیں ہوتی ہیں تو پہلی اذان کا جواب دینا واجب ہے اور دوسری تیسری اذانوں کا جواب مستحب ہے دوسری تیسری اذان کے وقت قرآن وحدیث کی باتیں کرسکتے ہیں۔ یا کوئی ضروری بات کرسکتے ہیں

                         واللہ اعلم باالصواب

      کتبـــــــــــــــــــــــــہ محمد الطاف حسین قادری

                اســـلامی مـــعلــومـات گـــــروپ 

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only