4.02.2020

کیا غسل کے وضو سے نماز پڑھ سکتے ہیں


             اَلسَلامُ عَلَيْكُم وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ‎ 

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ غسل میں جو وضو کیا جاتا ہے کیا اُس وضو سے نماز ہوگی اور اسی وضو سے قرآن شریف کی تلاوت کرنا کیسا ہے

                ( فقیر ،،غلام محی الدین)
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
            وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ 

               الجواب بعون الملک الوھاب

اسی طرح سے فتاویٰ مرکز تربیت افتاء میں ہے کہ غسل کر نے کے بعد نماز کے لیے دوبارہ وضو کرنے کی ضرورت نہیں ہےاسی طرح فتاویٰ مرکز تربت افتاء میں ہےجبکہ غسل کے بعد کوئی حدث لاحق نہ ہوا ہو۔ جیسا کہ حدیث شریف میں ہےعن عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا قالت کان النبی ﷺ لایتوضا بعد الغسل ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا فرماتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم غسل کے بعد آپ وضو نہیں فرماتے۔ (مشکوۃ شریف باب الغسل صفحہ نمبر 48)اور دوسری حدیث شریف میں ہے کہ من توضأبعد الغسل فلیس منا حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جو شخص غسل کے بعد وضو کرے تو وہ میرے طریقہ پر نہیں (کنزالعمال جلد ۹ باب الغسل حدیث نمبر 26249) بحوالہ فتاوی مرکز تربیت افتاء جلد اول باب الغسل صفحہ نمبر 101

                   واللہ اعلم بالصواب 

        کتبہ ناچیز محمد شفیق رضا رضوی

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only