4.04.2020

قضاء نماز کے ساتھ سنت قضاء پڑھنا کیسا


              السلام علیکم و رحمۃ اللہ وبرکاتہ.

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام ومفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ اگر کسی شخص کی نماز فجر قضا ہوگئی ہے اور وہ قضا پڑھے تو کیا اس صورت میں فجر کی جو دو رکعت سنت مؤکدہ ہے تو وہ بھی قضا پڑھا جائے گا برائے مہربانی جواب عنایت فرمائیں

            . سائل : محمد ساجد رضا گونڈہ.
ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
         وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ تعالیٰ وبرکاتہ 

                الجواب بعون الملک الوہاب 

صورت مذکورہ میں اگر کسی کی نماز فجر قضا ہوگئی اسی دن اور وہ زوال سے پہلے قضا پڑھے تو سنتوں کی بھی قضا کرے ورنہ نہیں - جیساکہ حضور صدر الشریعہ بدر الطریقہ علیہ الرحمۃ والرضوان بہار شریعت میں بحوالہ ردالمحتار تحریر فرماتے ہیں کہ " فجر کی نماز قضا ہوگئی اور زوال سے پہلے پڑھ لی تو سنتیں بھی پڑھے ورنہ نہیں علاوہ فجر کے اور سنتیں قضا ہوگئیں تو انکی قضا نہیں " اھ( ح:4/ص:664/ سنن و نوافل کا بیان / مجلس المدینۃ العلمیۃ دعوت اسلامی) اور فتاوی ھندیہ میں ہے کہ " اذا فاتتا مع الفرض یقضیھما بعد طلوع الشمس الی وقت الزوال ثم یسقط ھکذا فی محیط السرخسی و ھو الصحیح ھکذا فی البحر الرائق " اھ( ج:1/ص:113/ الباب التاسع فی النوافل / بیروت )

               واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب 

کتبہ اسرار احمد نوری بریلوی خادم التدریس والافتاء مدرسہ عربیہ اہل سنت فیض العلوم کالا ڈھونگی ضلع نینی تال اتراکھنڈ

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only