11.16.2020

دوکان کھولتے وقت اگر بتی جلانا کیسا ہے



 السلام عليكم و رحمة الله و بركاته 

علماے کرام کی بارگاہ میں ایک سوال عرض ھیکہ کیا دوکان کھولتے وقت اگر بتی جلانا سہی ہے یا غلط جواب عنایت فرمایں کرم ھوگا


 سایل محمد جابر علی گونڈہ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

وَعَلَيْكُم السَّلَام وَرَحْمَةُ اَللهِ وَبَرَكاتُهُ‎

الجواب اللھم ھدایۃ الحق والصواب 


جلاسکتےہیں البتہ ضروری نہیں میرانظریہ ہےکہ اگربتی وغیرہ سےبچیں اسلیۓماہرین ڈاکٹروں کاکہناہےکہ اگربتی میں بہت سارےکیمکل ایسےملےہوۓ ہیں کہ اسکادھواں سانس وقلب وغیرہ کےلیۓشدیدمضرہےہاں یہ ضروری ہےکہ صبح کی نمازپڑھکرتب دکان کھولےتاکہ کاروبارمیں برکتیں نازل ہوجیساکہ حدیث میں ہےعن سلمان قال سمعت رسول اللہﷺیقول من غداالی صلوٰةالصبح غدابرایةالایمان ومن غداالی السوق غدابرایةابلیس حضرت سلمان رضی اللہ تعالی عنہ نے کہا کہ میں نےنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ جو شخص فجر کی نماز کو گیا وہ ایمان کا جھنڈا لے کر گیا اور صبح سویرے بازار کی طرف گیا تو وہ شیطان کا جھنڈالےکرگیا (ابن ماجہ حوالہ انوارالحدیث صفحہ١٥١ شبیربرادرز لاھور)


واللہ اعلم باالصواب 


کتبہ عبید اللہ بریلوی خادم التدریس مدرسہ دارارقم محمدیہ میرگنج بریلی شریف  09ربیع الاول ١٤٤٢ھ

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only