3.16.2021

اذان میں اشھد ان محمد الرسول میں دو زبر دو پیش پڑھنا کیسا ہے



اَلسَّــلَامْ عَلَیْڪُمْ وَرَحْمَةُ اللہِ وَبَرَڪَاتُہْ 

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسٔلہ میں کہ اگر کوئی شخص اذان میں اشھد ان محمد رسول اللّٰہ میں محمد کی دال پر دو پیش اور رسول کے لام پر دو زبر پڑھنے والے کے لیے کیا حکم شرع ہوگی جبکہ لام کے اوپر دو پیش ہے تفصیلی بحوالہ جواب عنایت فرمائیں نوازش ہوگی

المستفتی منصور احمد علی گنج


وعلیکم السلام و رحمۃ اللّٰہ و برکاتہ


الجواب بعون الملک الوھاب


صورت مسؤلہ عن الاذان فی السوال تفصیل و تاویل طلب ہے اور وہ یہ ہی کہ اگر اشھد ان محمدًا رسولُ اللہکے محمد کے دال کو منونا بالضم اور رسول کے لام کو منونا بالفتح پڑھنے کی صورت میں تاویل یوں ہے کہ محمد کو خبر مقدم مان لیا جائے اور رسولا  کو رسولا من اللہ کی تاویل میں لے لیا جاۓ{کما قال تعالی رسول من اللہ سورہ البینہ} اور اسم مٶخر مان لیا جاۓ اور ایسا کلام عرب میں کثیرالوقوع ہےلہذا صورت مسئولہ میں اذان ہو جاۓ گی کیونکہ نہ تو فساد معنی ہے اور نہ ہی قواعد عربیہ کے خلاف و متصادم ہاں اگر کویٸ دانستہ یا عذر زبانی کی بنیاد پر کرے تو یہ جاٸز نہیں کہ صورت مذکورہ فی السوال منزل کے خلاف ہے


واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب


کتبہ۔ محمد ساجد چشتی شاہجہاں پوری خادم مدرسہ دارارقم محمدیہ میر گنج بریلی شریف


✔️✔️الجواب صحیح والمجیب نجیح فقیر محمد ابراہیم خان امجدی قادری رضوی بلرامپور 

ایک تبصرہ شائع کریں

براۓ مہربانی کمینٹ سیکشن میں بحث و مباحثہ نہ کریں، پوسٹ میں کچھ کمی نظر آۓ تو اہل علم حضرات مطلع کریں جزاک اللہ

فـہـرسـت گـــــروپ مـنـتـظـمـیـن

...
رابـطـہ کــــریـں

Whatsapp Button works on Mobile Device only